…روٹی

0
484

گندم کو اگر تہلیل ہونا ہے لباسِ روٹی میں
اُسے پہلے انا کو چھوڑ، خودی کی چکی میں خود کو پسوانا ہوگا

جب پِس جائے اور حالت مٹی ہو جائے تو اُس کو درکار ہیں وہ ہاتھ
کہ جو تناسب جانتے ہوں آٹے اور پانی کو ملانے کا

جو اُس کو گوندھ کے عشق کا ذائقہ گھولیں
پھر اُس کو گول سے پیڑے میں بڑے پیار سے موڑیں

پھر اُس کو تھپکا دیں اور ظاہر کو تبدیل کر ڈالیں
پھر اُس کو عشق کی بھٹی میں جلا کے رنگ بھر ڈالیں

وہ جب تہلیل ہو کے عشق کے سانچے میں ڈھل جائے
اُسے نگاہِ مستی سے جہاں میں پیش کر ڈالیں

نینٗ بقاء یہ ہے کہ یہ روٹی اُسی کی ہے، اُسی سے ہے
وہ جب چاہیں ہو کو پھونک کے روح کر ڈالیں

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here