نیا سال

0
311

کیا کہا نیا سال آیا ہے
ارے چھوڑو بس رہنے دو

پہلے بھی تم نے یہی بولا تھا
جانتے ہو اُس کے بعد کتنوں نے اپنا نصیب ٹٹولا تھا

وبا کے نام ہوا سالِ گزشتہ
بُرا انجام ہوا سالِ گزشتہ

ہر گھر سے آوازِ غم آئ تھی
آنسو کی لڑی ہر چہرے پے چھائی تھی

کاروبار سبھی بند کر ڈالے
روزی کے پڑ گئے تھے لالے

سڑکیں خالی سنسان سبھی رستے ہوئے
قید میں تھے قہقہے سبھی ترستے ہوئے

اب بھی اُس کی باقیات ہیں باقی
ذہن پے اُس کی تہمات ہیں ثاقی

اب نہ اُمید پھر جگاؤ نینٗ
نیا سال چھوڑو خود کو سمجھاؤ نینٗ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here