پِیا

0
513

مینے ناچ کے گُھنگرو توڑ دیے
میری طلب ابھی جوان پیا
توں تخت پے یونہی بیٹھا رہ
تُجھے تکتا رہوں میری جان پیا

مینےخوشبو سونگھی پھولوں کی
اور رنگ دیکھے انیک بہت
تیری محفل کی خوشبو وکھری ہے
تیرے عشق کا رنگ انجان پیا

کعبے میں توں آواز بھرے
تیرا راگ اِدھر پرواز کرے
تیری ہُو میں جُھومے جگ سارا
تیری نِسبت ہے پہچان پیا

یہ دِل دھڑکے سو زندہ ہوں
یہ رُک جاۓ تو مُردہ
توں سانس میرے اِس جیون کی
بِن تیرے میں بے جان پیا

کوئی نام سے خود کو نینٗ کہے
کوئی علی کہے حسنین کہے
تیری شان کے جلوے کیا کہنے
افضل ہے توں بے نام پیا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here